Browsing Category

ماريا اسماعيل

آلودگی کس طرح آبی مخلوق اور انسانی زندگی پر اثر انداز ہو رہی ہے؟

کراچی کے ابراہیم حیدری، یونس آباد، ہاکس بے کے قریب کلکا گوٹھ اور شمس جزیرہ سمیت دیگرعلاقے ایسے ہیں جہاں مچھیروں کی آبادی کئی صدیوں آبادی ہیں جو اپنے آباٸی پیشے کواپناتے ہوٸے زندگی  گزاررہے ہیں۔ لیکن اب مچھیروں کےان قدیم ترین گاؤں کے…

سنڌ ۾ هارين بابت سال 2019 جي رپورٽ جاري

سنڌ۾ لکين هاري غربت ،بک ۽ بدحالي جو شڪار آهن .سنڌ جو هاري صدين کان ظلم جو شڪار رهندو پيو اچي اسيمبلين ۾ جاگيردارن هجڻ ڪري هارين بابت جوڙيل قانونن تي عمل نٿو ٿئي، سنڌ ۾ جاگيردار اڇي ۽ ڪاري جا مالڪ بڻيل آهن، هارين جو صحيح ۽ منصفاڻو حساب ڪتاب…

مذہبی ہم آہنگی کی مثال کراچی کی بستی

کراچی میں غیرمسلموں کی بہت بڑی تعداد صدیوں سے رہائش پذیر ہے، شہر کراچی کے قدیم علاقے، 'رنچھوڑ لائن' کے ’نارائن پورہ کمپاؤنڈ' میں ایک ایسی ہی قدیم بستی آباد ہے، جہاں تین مذاہب سے تعلق رکھنے والے افراد برسہا برس سے ایک ساتھ زندگی گزار رہے…

سندھ میں ڈیم بنانے سے انسانوں اور آبی حیات کے جان کوخطرہ

آبی اورتعلیمی ماہرین نے وفاقی حکومت کی طرف سے اعلانیہ دیامیر بھاشا ڈیم منصوبے کو مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ دریائے سندھ پر ڈیم بنانے سے انڈس ڈیلٹا میں موجود  انسانوں اور دیگر جانوں کو بہت نقصان پہنچے گا۔ پاکستان فشر فوک فورم کہ زیراہتمام…

لاک ڈاؤن سے انسانوں کی طرح جانور بھی متاثر

کراچی میں کورونا وائرس کی وبا کے باعث لاک ڈاؤن سے انسان توانسان جانوربھی پریشان ہوگئے ہیں، چڑیا گھرمیں موجود جانوروں اورپرندوں پرایک اداسی چھائی ہوئی ہے،  گنجائش سے چھوٹے پنجروں میں بے حال جانوروں کو متواتر خوراک فراہم کرنا بھی مسئلہ بن گیا…

نامکمل حفاظتی اقدامات اور حکومت کی غیر سنجیدگی کورونا سے متعلق درد بڑھانے کا سبب

صوبہ سندھ کے دارلحکومت کراچی میں اگرچہ کورونا وائرس سے بھی اموات ہوئیں تاہم کورونا کی وبا کے دوران ہی 387 افراد کی پراسرار اموات کے انکشاف نے کراچی کے شہریوں سمیت پورے ملک کے عوام میں خوف بڑھا دیا تھا، یہ اموات 31 مارچ سے 13 اپریل تک ہوئیں…

سرکاری ملازمین ومراعات یافتہ افراد کے نام پراحساس پروگرام سے ہزاروں غریب لوگوں کونکالا  جا رہا ہے

صوبہ سندھ کے دارالحکومت کراچی میں 5 اپریل کوہرطرف لوگوں کی لائنیں لگی ہوئی تھی ایسا لگ رہا تھا کہ حکومت کا لاک ڈاؤن ختم ہوگیا ہے، شہرکے مختلف ڈسٹرکٹ کےڈپٹی کمشنرز کے دفاتر کے باہر مردوں اورخواتین کی الگ الگ لمبی قطاریں لگی ہوئی تھیں معلوم…

کراچی کس طرح وبا سے نمٹ رہا ہے؟

صوبہ سندھ کے دارالحکومت اور روشنیوں کے شہر کراچی کونہ جانے کس کی نظرلگ گئی کے پورے شہرمیں سناٹے کاراج ہے، اس بار اس شہر کو کسی دہشتگردی نہیں بلکہ وبا نے اپنی لپیٹ میں لے رکھا ہے مگر اس کے باوجود چندلوگ اس وبا کوشکست دینے میں کامیاب ہوگئے جن…

پاڪستان اندر ٻارن ۽ عورتن سان زيادتين جو سلسلو ۽ قانون سازيءَ جي کوٽ

پاڪستان اندر گهرن ۾ ڪم ڪندڙ ، مختلف اسڪولن ۽ مدرسن سميت ٻين جڳهن تي ٻارن سان زيادتين، جنسي ڏاڍاين ۽ قتل ٿيڻ سميت ناانصافين جا ڪيترائي واقعا ٿين ٿا جنهن ڪري سماج ۾ خوف ۽ عدم اعتماد جي فضا پيدا ٿي وئي آهي، وفاقي حڪومت سميت صوبائي حڪومتون به  …

آبادي جي شرح کي ڪٽنرول ۾ آڻڻ ضروري آهي

پاڪستان ۾ شرح پيدائش کي ڪنٽرول ڪرڻ ضروري آهي ان لاءِ اسان کي فيملي پلاننگ جي بهتر طور تي منصوبي بندي ڪرڻ گهرجي ۽ ماڻهن کي گهر گهر وڃي آگاهي ڏيڻ گهرجي.هن وقت دنيا جي ڪل آبادي 7 ارب 70 ڪروڙ جي لڳ ڀڳ آهي، جڏهن ته ان سڄي آبادي جو 61.3 سيڪڙو…