خان صاحب کراچی پکار رہا ہے‎

کاوش میمن

پاکستان کے سب سے بڑے شہر کراچی میں ہر طرف مسائل نظر آتے ہیں جہاں نظر گمائیں وہاں کچرے اور گندگی کے ڈھیر دکھائی دیتے ہیں شہر کی مختلف گلیوں اور سڑکوں کی یہی صورتحال ہے دوسری طرف سیوریج کا نظام بھی تباہ ہوچکا ہے شہر کے مختلف علاقوں میں ابلتے ہوئے گٹر بھی عوام کیلئے درد سر اور بیماریوں کا باعث بن رہے ہی

ٹوٹی پھوٹی سڑکیں ، گیس کے مسائل اور ٹرانسپورٹ وغیرہ کے مسائل بھی جنم لے رہے ہیں شہر کی کوئی سڑک ایسی نہیں ہے جو ٹوٹ پھوٹ کا شکار نہ ہوں سمجھ سے بالاتر ہے کہ  اتنے  فنڈز ملنے کے باوجود سڑکوں کی مرمت میں ناقص مواد کا استعمال کیوں کیا جاتا ہے اور باقی رقم اپنے جیب میں ڈال دی جاتی ہے جس کی وجہ سے سڑکیں جلد ہی بوسیدہ ہو جاتی ہیں  افسوس کی بات یہ ہے  کہ پورے ملک کی معیشت کو سہارے دینے والے شہر کی اس بدترین صورتحال پر سب خاموش ہیں شہر میں مسائل کے ڈھیر ہونے کے باوجود حکمران خواب خرگوش کے مزے لے رہے ہیں دیکھا جائے تو ایک شہر میں تین حکومتیں کام کررہی ہیں بلدیات میں ایم کیو ایم  اور صوبائی حکومت پیپلز پارٹی کی ہے جبکہ حکمران جماعت تحریک انصاف نے 2018 کے انتخابات میں سب سے زیادہ سیٹیں کراچی سے حاصل کی تھی اور انتخابی مہم میں عوام کے سامنے خان صاحب نے بڑے بلند و بانگ وعدے کیے تھے لیکن یہ سارے وعدے صرف تقریروں کی حد تک ہی دیکھائی دئیے

خان صاحب وزیراعظم بننے کے بعد اس طرح غائب ہوئے ہیں کہ شاید اب انھیں کراچی یاد بھی نہیں آتی  اور جب کبھی بھول سے یاد ابھی جائے تو ایک روزہ شہر کے دورے پر آتے ہیں اور اپنے وزیروں اور مشیروں سے ملاقاتیں کر کے واپس روانہ ہوجاتے ہیں تو دوسری جانب سائیں سرکار نے انتخابات میں سندھ سے کلین سوئپ کیا لیکن پچھلے 30 سالوں کی طرح سندھ کے عوام کی قسمت اب بھی نہیں بدلی  سندھ کے عوام آج بھی بنیادی ضروریات سے محروم ہیں حال ہی میں کتے کے کاٹنے کے متعدد واقعات پیش آئے ہسپتالوں میں ویکسین کی عدم دستیابی کی وجہ سے کئی افراد اپنی جان سے ہاتھ دھو بیٹھے لیکن مجال ہے کہ سائیں سرکار نے کسی ایک کے خلاف ایکشن لیا ہو یا کسی ایک کو سزا ملی ہو سزا تو سندھ کے عوام کو مل رہی ہے پچھلے 30 سالوں سے حکمران انتخابات سے قبل عوام کے پاس آتے ہیں اور بڑی بڑی بھڑکیں مار کر رفو چکر ہو جاتے ہیں اور بیچاری ہماری عوام بھی اتنی معصوم ہے کہ حکمرانوں کے جال میں آجاتی ہے

خان صاحب کراچی کے مسائل کی طرف توجہ دیں اور کئی سالوں سے جاری منصوبوں کو پائے تکمیل تک پہنچائیں آپ کو وزارت عظمیٰ کی کرسی پر براجمان کرنے میں کراچی کے عوام نے کلیدی کردار ادا کیا اور یہاں کہ شہریوں نے پہلی بار وہ کر کے دکھایا جس کا کسی کو گمان بھی نہ تھا آپ کی اتحادی جماعت جو ماضی میں اس شہر پر حکمرانی کرتی رہی ہے لیکن اس وقت بھی کراچی والے مسائل حل نہ ہونے کا رونا رو رہے تھے اور آج بھی یہاں کی عوام رو رہی ہے اس کے علاوہ ان کے پاس کوئی چارہ بھی نہیں ہے

 

وزیراعظم صاحب تبدیلی باتوں سے نہیں آئے گی کام کرنے سے آئے گی آپ کی حکومت کو ڈیڑھ سال سے زائد کا وقت ہوچکا ہے لیکن ابھی تک صرف باتیں ہی کی جارہی ہیں اور کارکردگی صفر دیکھائی دے رہی ہے  عوام میں مایوسی پھیل رہی ہے خان صاحب ! خدارا کراچی کے عوام کی فریاد سن لیں ہر دفعہ اس شہر کے ساتھ سوتیلی ماں جیسا سلوک رواں رکھا گیا ہے اس بار کراچی کے عوام نے آپ کو ووٹ دے کر اپنی قسمت کے بدلنے کی امید لگائی ہے خان صاحب کراچی پکار رہا ہے

You might also like

Leave A Reply

Your email address will not be published.